کشمیر کو دوسرا فلسطین بنانے کا منصوبہ!! ایک لاکھ ہندوؤں کو کشمیری ڈو میسائل جاری، بھارت اپنی گھناؤنی سازش سے باز نہ آیا

لاہور(قدرت روزنامہ)) نامور تجزیہ کار رانا محمد عظیم نے کہا ہے کہ بھارت نے کشمیر کو دوسرا فلسطین بنانے کے ماڈل پر کام شروع کردیا، کشمیر میں بھارت کے مختلف شہروں سے آ کر رہنے والوں کا باقاعدہ مقبوضہ کشمیر کا ڈومیسائل بنا کر انہیں وہاں کا شہری بنا دیا ، بھارت کا مقبوضہ کشمیر میں لاک ڈاون اور کرفیو نافذ کرنے کے منصوبہ کی اصل کہانی سامنے آ نا شروع ہو گئی ، ذرائع کے مطابق بھارت نے مقبوضہ کشمیر کے اندر پلاننگ کے تحت اسرائیلی خفیہ ایجنسی را کی مکمل معاونت سے دیگر علاقوں کے افراد کو لا کر بسانا شروع کردیا، فلسطین میں اسرائیل نے بھی یہودی بستیاں آباد کرکے انہیں وہاں کا شہری بنا کر آئینی حق دیا تھا . بھارت نے اپنے پلان کے مطابق صوبہ بہار ، دہلی ، چندی گڑھ ،کلکتہ، چنائی ، بنگلور، مہاشٹرا سے تین لاکھ سے زائد ہندووں کو مقبوضہ کشمیر کے مختلف علاقوں کا شہری بنا کر ان کے ڈومیسائل بنانے شروع کردئیے ہیں، ذرائع کا کہنا ہے پہلے مرحلے میں تین لاکھ ہندوؤں کا کشمیری شہری بنایاجائے گا ، اس کے بعد مزید چار لاکھ ہندووں کو کشمیری شہری بنانے کیلئے ان کے ڈومیسائل بنائے جائیں گے ، ذرائع نے تصدیق کی کہ پورے مقبوضہ جموں و کشمیر کے اندر ڈومیسائل اور شناختی کارڈ ڈیپارٹمنٹ میں ہندو آ فیسرز کی تعیناتیاں کی گئی ہیں اور انہیں ہدایات جاری کی گئی ہیں وہ تفصیلات کسی صورت میں بھی باہر نہ جانے دیں ، ذرائع کا کہنا ہے

اب تک ایک لاکھ سے زائد ایسے ہندووں کے ڈومیسائل بن چکے ہیں جو رہ تو ہندوستان کے مختلف شہروں میں رہے ہیں مگر کاغذات کے اندر انہیں کشمیری بنا دیا گیا ، ان میں سے اکثر کا تعلق ہندو انتہا پسند تنظیم آ ر ایس ایس سے ہے ، جن ہندووں کے ڈومیسائل بنائے جا رہے ہیں ان میں سے ساٹھ فیصد مقبوضہ جموں و کشمیر کے مختلف علاقوں میں لائے جا رہے ہیں ، مکمل افراد کو حالات قابو میں آ نے کے بعد لایا جائے گا، یہ خوفناک پلان اس وقت بے نقا ب ہو گیا جب بھارت کے صوبہ بہار سے تعلق رکھنے والے ہندو نوین کمار چوہدری کو مقبوضہ جموں و کشمیر کا ڈومیسائل بنا کر دیا گیا تو وہ خفیہ رکھنے کی بجائے ڈو میسائل منظر عام پر لے آیا، غیر ملکی سفارت خانے میں جمع ہونے والے کاغذات میں تیرہ ایسے ڈومیسائل موجود ہیں جو مقبوضہ کشمیر کے بنائے گئے ہیں مگر جن کے ڈومیسائل بنائے گئے ہیں وہ صوبہ مہاشٹرا میں رکنے والے ہیں جن میں سری رام ، اکشے ، بجیرا، ایمبش، وجے ،مرلی کے نام شامل ہیں ، ذرائع کا کہنا ہے کشمیر ی حریت پسند رہنماوں نے خوفناک منصوبے کو بین الاقوامی سطح پر بے نقاب کرنا شروع کر دیا ہے .


..


Top