مقبوضہ کشمیرمیں طالب علم کی شہادت پر سرینگر میں ہنگامے پھوٹ پڑے، پولیس اور نوجوانوں میں شدید جھڑپیں

سرینگر(قدرت روزنامہ)مقبوضہ کشمیر میں گزشتہ روز بھارتی فوجیوں اور مجاہدین کے درمیان سرینگر میں ایک جھڑپ کے دوران زخمی ہونے والا ایک کشمیری کمسن نوجوان باسم اعجاز بدھ کو زخموںکی تاب نہ لاتے ہوئے شہید ہوگیا،جب باسم کا جنازہ قبرستان شہدا عیدگاہ پہنچا تو پولیس اور نوجوانوں کے مابین جھڑپوں کے بعد شدید ہنگامے پھوٹ پڑے . میڈیا رپورٹ کے مطابق بارہ سالہ باسم اعجازجو ساتویں جماعت کا طالب علم تھا

گزشتہ روز سرینگر کے علاقے نوا کدل میںمجاہدین اور بھارتی کے درمیان جھڑپ کے بعد ایک مکان منہدم ہونے کی وجہ سے تین دیگر کشمیریوں کے ہمراہ شدید زخمی ہو گیا تھا جو زخموںکی تاب نہ لاتے ہوئے چل بسا .

ضرور پڑھیں: کینیا میں ماسک نہ پہننے پر پولیس اور شہریوں کے درمیان تنازع، پولیس نے تین افراد کو گولی مار دی

وہ سرینگر کے ایس ایم ایچ ایس ہسپتال میں زیر علاج تھا . گزشتہ روز نوا کدل میں ایک جھڑپ کے دوران حزب المجاہدین کے اعلی کمانڈر جنید صحرائی اپنے ایک ساتھی طارق احمد کے ہمراہ شہید ہو گئے تھے.

..

ضرور پڑھیں: خیبر پختونخواہ کی مثالی پولیس کا شرمناک ترین رویہ ، نوجوان کو پولیس اسٹیشن میں برہنہ کر دیا، ویڈیو وائرل


Top