پاکستانی ڈاکٹر کا شاندار کارنامہ۔۔!!وینٹی لیٹر کوکم از کم سات مریضوں کیلئے قابل استعمال بنانے والے ماہر مسیحا نے دھوم مچا دی

واشنگٹن(قدرت روزنامہ) پاکستانی نژاد امریکی ڈاکٹر سعود انور نے کارنامہ سرانجام دیتے ہوئے ایک وینٹی لیٹر کو 7 یا اس سے بھی زیادہ مریضوں کیلئے قابل استعما ل بنادیا ہے . امریکہ میں مقیم پاکستانی ڈاکٹر نے اپنی ٹیم کے ہمراہ ایک وینٹی لیٹر سے7 یا اس سے زائد مریضوں کو مصنوعی سانس دینے کا کامیاب تجربہ کیا انہوں نے اس مقصد کیلئے تھری ڈی پرنٹنگ استعمال کی .

اس موقع پر ڈاکٹر سعود کا کہنا تھا کہ “یہ ٹیکنالوجی انتہائی مفید ہے اس سے وینٹی لیٹرز کی کمی کا سامنا نہیں کرنا پڑے گا، اس ٹیکنالوجی سے بیک وقت 7 مریضوں کو مصنوعی طور پر سانس دی جاسکتی ہے،اس دوران اگر ایک مریض کی طبیعت خراب ہوجائے تو اس دوران باقی مریضوں پر کوئی اثر نہیں پڑے گا”.انہوں نے مزید کہا کہ” حکومت کو سمجھنا ہوگا، زیادہ آبادی اور کم وسائل ہونے کی وجہ سے یہ ممکن نہیں ہے کہ سماجی فاصلہ برقرار رکھا جاسکے، پاکستان میں اس صورتحال سے نمٹنے کیلئے ضروری ہے کہ ہسپتالوں میں مریضوں کا ریکارڈ موجود ہو، یہ بد قسمتی ہے کہ پاکستان میں مریضوں کا ڈیٹا مرتب نہیں کیا جاتا، اس کے کافی سنگین نتائج مرتب ہوسکتے ہیں”.واضح ہوکہ کورونا وائرس کے باعث پوری دنیا میں وینٹی لیٹرز کی اہمیت بڑھ گئی ہے، جس کے بعد دنیا کے ترقی یافتہ ممالک بھی اس کی کمی کا شکار ہیں اسی لیے ڈاکٹرز اور سائنسدان وینٹی لیٹر کا متبادل ڈھونڈنے میں مصروف ہیں.یاد رہے اس سے قبل ڈاکٹر سعود انور کو کورونا وائرس کے خلاف جنگ میں پہلی صف میں لڑنے پر امریکی شہریوں نے گاڑیوں کی ایک قطار کی پریڈ کرکے انہیں خراج تحسین پیش کیا تھا.

..


Top