معزز ترک صدر کا دورہ پاکستان!! آئی ایم ایف سے پیچھا چھڑوانے کیلئے وزیراعظم عمران خان کے پاس نادر اور سنہری موقع ہاتھ آگیا، دل خوش کردینے والی خبر

لاہور (قدرت روزنامہ) سینئر تجزیہ کار ڈاکٹر شاہدمسعود کا کہنا ہےکہ آئی ایم ایف سے پیچھا چھڑوانے کے لیے وزیراعظم عمران خان کو ترک صدر طیب اردوان سے سیکھنا پڑے گا کہ انہوں نے کیسے ترکی کو آئی ایم ایف سے الگ کیا . نجی ٹی نیوز چینل جی این این کے خصوصی پروگرام ” لائیو ود ڈاکٹر شاہد مسعود ” میں گفتگو کرتے ہوئے سینئر تجزیہ کار ڈاکٹر شاہدمسعود کا کہنا تھا کہ ترکی 1947 سے آئی ایف میں پھنسا ہوا تھا، ترکی کے ایک لیڈر عدنان میندورس نے 1954 میں آئی ایم ایف کے پاس جانے سے انکار کیا تھا ،وہ انتخابات جیتے مگر آئی ایم ایف کا ترکی کی سیاست میں اتنا عمل دخل ہو گیا تو اگلے انتخابات میں عدنان میندورس کو الیکشن ہروا دیا گیا اور اس کے بعد ترکی معاشی طور پر کمزور سے کمزور تر ہو تا گیا .

انہوں نے کہا کہ اگر آئی ایم ایف سے جان چھڑانی ہے تو وزیراعظم عمران خان اور پاکستان کو ترک صدر رجب طیب اردوان سے سیکھنا ہو گا.2001 میں جب ترکی میں معاشی بحران آیا تو ترکی نے کمال دروس کی خدمات حاصل کیں جو 22 سال عالمی بینک سے منسلک رہے

،انہوں نے ترکی کے لیے آئی ایم ایف سے 20 ارب ڈالر کا پیکج لیا . طیب اردوان نے 2008 میں کہا کہ وہ ترکی کا آئی ایم ایف سے پیچھا چھڑائیں گے اور انہوں نے 2013 میں آئی ایم ایف کی آخری قسط ادا کر دی اور ترکی کا آئی ایم ایف سے پیچھا چھڑا دیا. ان کا مزید کہنا تھا کہ 2013 کے بعد ترکی میں کئی مسائل کھڑے ہوئے مگر طیب اردوان نے کہا چاہے کچھ بھی ہو جائے ہم آئی ایم ایف کے پاس نہیں جائیں گے ،آئی ایم ایف والے ترکی کے پاس جاتے ہیں مگر ترکی انکار کر دیتا اور آئی آیم ایف ترکی کی اپوزیشن پارٹیوں کو سپورٹ بھی کرتا ہے ،جس پر طیب اردوان اپوزیشن جماعتوں کو آئی ایم ایف کا ایجنٹ قرار دیتے ہیں.آئی ایم ایف سے پیچھا چھڑانے کے بعد آج ترکی آئی ایم ایف کو 5 ارب ڈالر دیتا ہے کہ دوسرے ممالک کو قرض دے دیں.

..


Top