اداکار ساجد حسن کا ملکی حالات سے مایوس ہو کر پاکستان چھوڑنے کا فیصلہ

اسلام آباد (قدرت روزنامہ)معروف اداکارہ ساجد حسن نے ملکی صورتحال پر مایوسی کا اظہار کرتے ہوئے ملک چھوڑ کر بیرون ملک منتقل کرنے کا عندیہ دے دیا . انہوں نے حال ہی میں دئیے گئے انٹرویو میں کہا کہ وہ اتنے مایوس ہو چکے ہیں کہ وہ پاکستان سے چلے جانے کا سوچ رہے ہیں اور وہ یہاں سے چلے جائیں گے .

ساجد حسن نے کہا کہ ہمارے ملک میں بڑے بڑے نامور لوگوں کے کیرئیر تباہ ہو گئے ہیں. مجھے پورے ملک میں کوئی نہیں جانتا اور اگر میں بھی دیگر بڑے لوگوں کی طرح تباہ ہو گیا تو کسی کو کوئی فرق نہیں پڑے گا.یہ ملک بے حس ہو چکا ہے اور یہاں بڑے بڑے لوگوں کا کیرئیر تباہ ہو گیا ہے اور جو کوئی کام کرنا بھی چاہتا ہے تو انہیں کرنے نہیں دیا جاتا.حکومت اور انتظامیہ بھی غیر فعال ہے اور ان سے کوئی ڈھنگ کا کام نہیں ہو پا رہا. انٹرویو میں ساجد حسن نے کہا کہ درحقیقت جو وزیر اعظم بننے کا اہل ہو اسی کو وزیر اعظم بنایا جائے اور ٹھیک اسی طرح جو صدر بننے کا اہل ہو اسی کو صدر بنایا جائے. پاکستان میں موروثی سیاست پر یقین رکھا جاتا ہے اور اپنے ہی خاندان کے بیٹے، بیٹیاں ، داماد اور سسر وغیرہ کو نمائندگی دے دی جاتی ہے. ایسا دنیا میں کہیں نہیں ہوتا صرف پاکستان میں ہوتا ہے.اداکار کا کہنا ہے کہ ہمیں ہر پیشے کے لئے اسی پیشے سے وابستہ تجربہ کار شخص کی خدمات حاصل کرنی چاہیے. آپ سوچیں فواد چوہدری سائنس اینڈ ٹیکنالوجی کے وزیر ہیں. اللہ ہم سب کو معاف کرے. دوسری طرف فردوس عاشق عوان معاون خصوصی برائے اطلاعات و نشریات ہیں جس پر ہمیں خود کشی کر لینی چاہیے لیکن حرام ہے اس لئے نہیں کرتے.ساجد حسن نے تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ضروری نہیں کہ جنہیں ہم منتخب کریں وہ عقل مند بھی ہوں بہت سے لوگ نامعقول بھی ہوتے ہیں حتیٰ کہ 90 فیصد لیڈر بے وقوف ہوتے ہیں. یہاں تک کہ مودی کوئی عقل مند شخص نہیں بلکہ بہت ہی عجیب آدمی ہے ناک سے بولتا ہے. لیکن وزیر اعظم عمران خان سے بہتر ہے. کیوں کہ عمران خان کو دیکھ کر ایسا لگتا ہے جیسے وہ بدمعاش ہیں. یہ عمل برا ہوتا ہے اس سے ہم بچوں کو کیا سکھا رہے ہیں. اگر معاشرے میں برا ہورہا ہے تو اسے برا ہی کہا جائے گا، کسی بھی طرح اسے اچھا نہیں کہا جاسکتا.

..


Top