لڑکے نے 11 دوستوں کے ساتھ مل کر اپنے ہم جماعت کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا

بہاولپور ر(قدرت روزنامہ) پولیس کی مبینہ غفلت کی وجہ سے گیارھویں جماعت کے طالب علم کے ساتھ اجتماعی زیادتی کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی . تفصیلات کے مطابق ایک ماہ قبل نوجوان لڑکے کے جماعت کے ساتھی نے 11افراد کے ساتھ مل کر اس کو اجتماعی زیادتی کا نشانہ بنا ڈالا .


اس کیس میں ایک ملزم کو حراست میں لیا گیا تھا جب کہ دیگر ملزمان نے ضمانت قبل از گرفتاری حاصل کر لی جب کہ واقعے کا مرکزی ملزم فرار ہونے میں کامیاب ہو گیا. پولیس نے واقعے کا مقدمہ تو درج کر لیا لیکن ملزم سے واقعے کی ویڈیو حاصل نہیں کر سکے.ملزم کی جانب سے مقدمہ واپس لینے کے لیے متاثرہ طالب علم کے اہل خانہ کو دھمکیاں دی جا رہی ہیں.جب کہ پولیس کی غفلت کے سبب واقعے کی ویڈیو بھی سوشل میڈیا پر وائرل ہو گئی ہے. ایک میڈیا رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ مقدمہ درج کرنے کے بعد پولیس نے تفتیش ہی نہیں کی. متاثرہ لڑکی اور اس کے اہلخانہ پولیس کی غفلت کی شکایت کرنے کے لیے ریجنل پولیس افسر فیاض احمد دیو کے سامنے پیش ہوئے.جس پر آر پی او نے ڈسٹرکٹ پولیس افسر کو ملزمان کے خلاف کاروائی کرنے اور رپورٹ جمع کروانے کا حکم دیا ہے.اس حوالے سے ڈی پی او کے پرسنل ریلیشن آفیسر نے بتایا کہ زیادتی کا واقعہ 8 نومبر کو پیش آیا جس کے بعد 3 روز مقدمہ درج کیا گیا تھا. ایف آئی آر کے مطابق ملزمان طالب علم کو کھانا کھانے کے بہانے کچی بستی طبہ بدر شیر میں واقع ایک گھر میں لے گئے تھے.ملزمان نے طالب علم کے ساتھ اجتماعی زیادتی کی تھی اور اسے بلیک میل کرنے کے لیے ویڈیو بنا لی تھی.پی آر او کا دعویٰ ہے کہ پولیس نے چالان جمع کروا دیا.ملزم نے گرفتاری سے قبل عبوری ضمانت حاصل کر لی تھی جب کہ ڈی این اے کے نمونے بھیج دئیے گئے تھے اس کے علاوہ ڈی پی او نے ملزمان کی حراست کے لیے ٹیم تشکیل دے دی ہیں.

..


Top