’’مہربانی کریں، ہمیں اس عذاب سے نکالیے ۔۔۔‘‘شاہ محمود قریشی کی سعودی ہم منصب سے ملاقات، کیا اپیل کر ڈالی ؟ جانیے

جدہ(قدرت روزنامہ) وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے سعودی عرب کے ہم منصب فیصل بن فرحان بن عبداللہ سے ملاقات کی ہے جس میں دو طرفہ تعلقات ،مقبوضہ و جموں کشمیر کی صورتحال اور اہم علاقائی و بین الاقوامی امور پر تبادلہ خیال کیا گیا . تفصیل کے مطابق شاہ محمود قریشی سعودی وزارت خارجہ پہنچے جہاں ان کی سعودی حکام سے ملاقات ہوئی .

ضرور پڑھیں: آگ کو ٹھنڈا کرنے کیلئے بروقت اقدام نہ اٹھائے گئے تو یہ پورے خطے کو اپنی لپیٹ میں لے سکتی ہے،شاہ محمود قریشی کی سعودی ہم منصب سے انتہائی اہم ملاقات

اس موقع پر وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی نے اپنے سعودی ہم منصب کو مقبوضہ جموں و کشمیر کی تازہ ترین صورتحال سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان گذشتہ چار ماہ سے 80 لاکھ نہتے کشمیریوں کا مکمل محاصرہ کیے ہوئے ہے،ہندوستان نے دنیا کو اصل حقائق سے بے خبر رکھنے کیلئے ذرائع مواصلات پر مکمل پابندی عائد کر رکھی ہے بنیادی انسانی حقوق معطل ہیں .شاہ محمود قریشی نے بتایا کہ مقبوضہ جموں و کشمیر کے مظلوم، بھارتی ظلم و ستم سے نجات حاصل کرنے کے لیے عالمی برادری، بالخصوص مسلم امہ کی طرف دیکھ رہے ہیں،دونوں وزرائے خارجہ نے کثیرالجہتی شعبہ جات میں دو طرفہ تعاون کے فروغ اور خطے میں امن و استحکام کے لیے باہمی مشاورت جاری رکھنے پر اتفاق کیا. وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے سعودی عرب کی وزارت خارجہ میں “وزٹر بک” میں اپنے تاثرات بھی قلمبند کئے. جبکہ دوسری جانب ایک خبر کے مطابق وزیر اعظم عمران خان کی سابقہ اہلیہ اور معروف اینکر ریحام خان بھی پنجاب انسٹیوٹ آف کارڈیالوجی میں وکلاء گردی اور صوبائی وزیر اطلاعات پنجاب پر مشتعل وکلاءکے تشدد پرخاموش نہ رہ سکیں تاہم اُنہوں نے افسوسناک واقعہ کی مذمت کرتے ہوئےایسی بات کہہ دی ہےکہ وکیلوں کے ہاتھوں تھپڑوں کا شکار ہونےوالےفیاض الحسن چوہان کےدرد کی شدت میں اضافہ ہوجائےگاجبکہ تحریک انصاف کےکارکن بھی ریحام خان کےخلاف سوشل میڈیا پرگولہ باری کرنا شروع ہو جائیں گے .

مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ پر ٹویٹ کرتے ہوئے معروف صحافی خاتون ریحام خان کا کہنا تھا کہ آج لاہور میں صورتحال اتنی خراب نہ ہوتی اگر اُسے کنٹرول کرنے کےلیےاَہل لوگ موجود ہوتے،آج کا واقعہ حکومتی نااہلی کا منہ بولتا ثبوت ہے،وزیراعلٰی صاحب لاہور تو دور کی بات صوبے میں ہی موجود نہ تھے اوپر سے انتظامیہ کو احکامات دینے کے لیے سلیکٹڈ کے میسج کا انتظار کرتے رہے.ریحام خان کا کہنا تھا کہ فیاض الحسن چوہان کے ساتھ جو ہوا اچھا نہیں ہوا،میں اُس کی مذمت کرتی ہوں لیکن حکومتی وزراء کو خود اپنی حیثیت اور عوام میں مقبولیت کا اندازہ ہونا چاہیے،عوام میں حکومت کے خلاف شدید غم و غصہ پایا جاتا ہے ایسے میں وزراء ہیرو بننے کی کوشش کریں گے تو ایسا ہی ہوگا.اُنہوں نے کہا کہ آج حکومتی وزراء کے ساتھ لاہور کی سڑکوں پر جو ہو رہا ہے یہ اسی تربیت کا نتیجہ ہے جو سلیکٹڈ نے دی ہے،لوگوں کو گالیاں دینے اور گھسیٹنے کی دھمکیاں دینے والوں کو خود آج لاہور کی سڑکوں پر گھسیٹا جا رہا ہے.

..


Top