مقبوضہ کشمیر کوتقسیم کر کے مسلم اکثریتی تشخص ختم کیا جائے گا، جنوری کے اوائل میں اس منصوبہ پر عمل کیا جائے گا، ذرائع

کشمیری اس وجہ سے ریاست پر حکمرانی کررہے تھے کہ انہیں جموںاسمبلی میںزیادہ نشستیں حاصل تھیں، راہنما بی جے پی

سرینگر(قدرت روزنامہ)بھارت نے مقبوضہ کشمیر کو ایک بار پھر تقسیم کرنے کا منصوبہ تیار کر لیا ہے، منصوبے کے تحت مقبوضہ کشمیر کو دو ،دو ڈویژن میں تقسیم کر کے مسلم اکثریتی تشخص ختم کیا جائے گا، اس منصوبے پر عمل در آمد رواں ماہ کے آخر یا جنوری کے اوائل میں کیا جائے گا . بین الاقوامی خبر رساں ادارے کے مطابق مقبوضہ کشمیر کے تسلط کے خاتمے کے لئے بھارت نے ایک بار پھر مقبوضہ کشمیر کو تقسیم کرنے کے لئے تیار ہے .

ضرور پڑھیں: اوگرا نے جنوری کیلئے ایل این جی کی قیمت میں کمی کردی

بھارتی حکومت نے جموں کشمیر کی خصوصی حیثیت کے خاتمے کے بعد دو ،دو ڈویژن میں تقسیم کر کے وادی کشمیر کا مسلم اکثریتی تشخص ختم کرنے کا فیصلہ کیا ہے. ذرائع نے بتایا کہ اس منصوبے کو تقریباحتمی شکل دے دی گئی ہے اور ممکن ہے کہ اس ماہ کے آخر میں یا اگلے سال کے اوائل میں اس پر عمل درآمد کیا جائے .جموں و کشمیر حکومت کے ایک سینئر عہدیدار نے کہاکہ فیصلہ پہلے ہی کیاجا چکا ہے اور صرف طریق کار پر کام کیا جا رہا ہے.لیکن اس سے بھی اہم بات یہ ہے کہ اس سے دوسرے خطوں خصوصا جموں پر کشمیر کے تسلط کو مزید کم کیا جائے گا.ذرائع نے یہ بھی کہا کہ بھارتی وزارت داخلہ پہلے ہی اس منصوبے پر عمل پیرا ہے جبکہ حکمراں بی جے پی اس اقدام کو جموں پر کشمیر کے قبضے کو ختم کرنے کے ایک اہم اقدام کے طور پر دیکھتی ہے.ذرائع کے مطابق اس معاملے پر جموں و کشمیر کے افسران اور مرکزی وزارت داخلہ امور کے سینئر عہدیداروں کے درمیان ایک اعلی سطحی میٹنگ میں بھی تبادلہ خیال کیا گیا.بی جے پی کے ایک سینئر رہنما نے کہا کہ کشمیری صرف اس وجہ سے ریاست پر حکمرانی کررہے تھے کہ انہیں اسمبلی میں جموں کے علاقے کی نسبت زیادہ نشستیں حاصل تھیں .

..

ضرور پڑھیں: جنوری میں دو اہم فیصلے کیے جائیں گے


Top