الیکشن کمیشن ممبران کا تقرر،حکومت کو بلوچستان ، اپوزیشن کو سندھ کے ممبر کا نام دینے پر فریقین میں اتفاق

 

پارلیمانی کمیٹی کا اجلاس(آج) دوبارہ ہو گا، جسکے بعد الیکشن کمیشن کے سند ھ اور بلوچستان کے ممبران کا اعلان کیا جائیگا

 

اپوزیشن کا پارلیمانی کمیٹی اجلاس سے قبل اپنا الگ سے اجلاس بھی ہوگا، بلوچستان سے حکومت کی جانب سے نوید جان بلوچ کا نام تجویز، اپوزیشن نے مشاورت کیلئے (آج)تک کا وقت مانگ لیا

 

اپوزیشن اور حکومت کا الیکشن کمیشن ارکان کی تقرری اور باہمی تعاون پر اتفاق ہوا ہے،ہم اتفاق رائے کی جانب بڑھ رہے ہیں ، اپوزیشن نے مشاورت کیلئے وقت مانگا ہے، (آج) الیکشن کمیشن کے نئے ممبران کے ناموں کا اعلان کردیا جائیگا،پارلیمانی کمیٹی کی چیئرپرسن ڈاکٹرشیریں مزاری کی اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو

 

اتفاق رائے کی طرف بڑھ رہے ہیں ،ابھی کسی نام پر حتمی اتفاق نہیں ہوا ،(آج)اتفاق ہوجائے گا ،اپوزیشن میں کسی نام پر اختلاف نہیں ، ہم ایسا الیکشن کمیشن چاہ رہے ہیں جس پر کسی سیاسی جماعت کو اعتراض نہ ہو ،سیاست میں کچھ لو کچھ دو کے معاملہ پر بات ہوتی ہے، اپوزیشن رہنما ئوںراجہ پرویز اشرف، مرتضی جاوید عباسی اور سینیٹرمشاہد اللہ خان کی میڈیا سے گفتگو

اسلام آباد(قدرت روزنامہ)حکومت اور اپوزیشن میں الیکشن کمیشن کے ممبران کے تقرر پراہم پیش رفت ہوئی ہے،حکومت کو بلوچستان جبکہ اپوزیشن کو سندھ کے ممبر کا نام دینے پر فریقین میں اتفاق ہو گیاہے،پارلیمانی کمیٹی کا اجلاس(آج)بدھ کو دوبارہ ہو گا جسکے بعد الیکشن کمیشن کے سند ھ اور بلوچستان کے ممبران کا اعلان کیا جائیگا،اپوزیشن جماعتوں نے کمیٹی اجلاس سے قبل اپنا الگ سے اہم اجلاس بھی طلب کر لیاہے . پارلیمانی کمیٹی میں بلوچستان سے حکومت نے نوید جان بلوچ کا نام تجویز کیا جبکہ اپوزیشن نے مشاورت کیلئے (آج)تک کا وقت مانگ لیا .

ضرور پڑھیں: اپوزیشن نے فوج سے متعلق وزیراعظم کے بیان کو ‘غیر ذمہ دارانہ’ قرار دے دیا

پارلیمانی کمیٹی کی چیئرپرسن ڈاکٹرشیریں مزاری کا کہنا ہے کہ اپوزیشن اور حکومت کا الیکشن کمیشن ارکان کی تقرری اور باہمی تعاون پر اتفاق ہوا ہے،ہم اتفاق رائے کی جانب بڑھ رہے ہیں ، اپوزیشن نے مشاورت کیلئے وقت مانگا ہے، (آج) الیکشن کمیشن کے نئے ممبران کے ناموں کا اعلان کردیا جائیگا. اپوزیشن رہنمائوں راجہ پرویز اشرف، مرتضی جاوید عباسی اور سینیٹرمشاہد اللہ خان کا کہنا ہے کہ اتفاق رائے کی طرف بڑھ رہے ہیں ،

ابھی کسی نام پر حتمی اتفاق نہیں ہوا ،(آج)اتفاق ہوجائے گا ،اپوزیشن میں کسی نام پر اختلاف نہیں ، ہم ایسا الیکشن کمیشن چاہ رہے ہیں جس پر کسی سیاسی جماعت کو اعتراض نہ ہو ،سیاست میں کچھ لو کچھ دو کے معاملہ پر بات ہوتی ہے.منگل کوالیکشن کمیشن کے ارکان کی تقرری کے لئے وفاقی وزیرانسانی حقوق ڈاکٹر شیریں مزاری کی زیر صدارت پارلیمانی کمیٹی کا ان کیمرہ اجلاس پارلیمنٹ ہائوس میں ہوا ،جس میں حکومت کی جانب سے وزیر مملکت علی محمد خان، فخر امام، محمد میاں سومرو، سینیٹر اعظم سواتی اور سینیٹر نصیب اللہ بازئی نے شرکت کی جبکہ اپوزیشن کی جانب سے مرتضیٰ جاوید عباسی، ڈاکٹر نثار چیمہ ، سینیٹر مشاہد اللہ خان،راجہ پرویز اشرف، ڈاکٹر سکندر مندھرو اورشاہدہ اخترعلی نے شرکت کی.پارلیمانی پارٹی کے اجلاس میں سندھ اور بلوچستان سے الیکشن کمیشن کے ممبران کی تقرری کے لئے حکومتی اور اپوزیشن کی جانب سے نامزدگیوں کا جائزہ لیا گیا.ذرائع کے مطابق حکومت اور اپوزیشن نے ابتدائی طورپر دونوں طرف سے ایک ایک ممبر لینے پر اتفاق ہوا ہے.

حکومت کو بلوچستان جبکہ اپوزیشن کو سندھ کے ممبر کا نام دینے پر اتفاق ہوا ہے،پارلیمانی کمیٹی میں بلوچستان سے حکومت کے تجویز کردہ نوید جان بلوچ کے نام پر اتفاق ہوا. مسلم لیگ ن اور پیپلزپارٹی میں ممبر سندھ کے لیے اتفاق نہیں ہوسکا اور دونوں اپوزیشن جماعتیں ایک نام پر متفق ہونے کیلئے (آج)بدھ تک کا وقت مانگ ہے.اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کمیٹی کی چیئرپرسن ڈاکٹرشیریں مزاری نے بتایا کہ اپوزیشن اور حکومت کا الیکشن کمیشن ارکان کی تقرری اور باہمی تعاون پر اتفاق ہوگیا ہے،ہم اتفاق رائے کی جانب بڑھ رہے ہیں ، اپوزیشن نے مشاورت کیلئے وقت مانگا ہے، (آج)بدھ کو 2 بجے دوبارہ پارلیمانی کمیٹی کا اجلاس دوبارہ ہوگا جس کے بعد انشاء اللہ قومی اسمبلی اجلاس سے قبل ممبران کے ناموں کا اعلان کردیا جائے گا.

اپوزیشن رہنمائوں نے کہا کہ تاحال کوئی حتمی نام نہیں تاہم اتفاق رائے کی طرف بڑھ رہے ہیں .پیپلز پارٹی کے راجہ پرویزاشرف نے کہا کہ اتفاق رائے کی طرف بڑھ رہے ہیں ،ابھی کسی نام پر حتمی اتفاق نہیں ہوا ،(آج)بدھ کو قومی اسمبلی اجلاس سے قبل اتفاق ہوجائے گا ،اپوزیشن میں کسی نام پر اختلاف نہیں ،اختلاف رائے جمہوریت کا حسن ہوتا ہے.مسلم لیگ (ن)کے مرتضی جاوید عباسی نے کہا کہ الیکشن کمیشن کو غیر فعال ہونے میں 2 دن رہ گئے، اب حکومت کو یاد آگیا ہے، حکومت کی آئینی ذمہ داری ہے، اپوزیشن اپنا کردار ادا کر رہی ہے، ابھی تک کسی نام پر اتفاق نہیں ہوا، ہم ایسا الیکشن کمیشن چاہ رہے ہیں جس پر کسی سیاسی جماعت کو اعتراض نہ ہو.لیگی سینیٹرمشاہد اللہ خان کا کہنا تھا سیاست میں کچھ لو کچھ دو کے معاملہ پر بات ہوتی ہے،

کمیٹی میں حکومت اور اپوزیشن کے اراکین کی تعداد مساوی ہے، ابھی تک کمیٹی غور و خوض جاری رکھے ہوئے ہے، کسی نام پر اتفاق نہیں ہوا.دوسری جانب اپوزیشن جماعتوں نے پارلیمانی کمیٹی کے اجلاس سے قبل اپنا مشاورت اجلاس (آج)بدھ کو طلب کر لیا ہے جو ڈیڑھ بجے اپوزیشن لیڈر کے چیمبر میں ہوگا.اپوزیشن رہنما پارلیمانی کمیٹی اجلاس سے قبل الیکشن ممبران کی تقرری پرحتمی مشاورت کرینگے.واضح رہے کہ وزیراعظم عمران خان نے چیئرمین سینیٹ اور اسپیکر قومی اسمبلی کے نام لکھے گئے خط میں کمیشن ارکان کیلئے سندھ سے جسٹس ریٹائرڈ صادق بھٹی، جسٹس ریٹائرڈ نور الحق قریشی، عبدالجبار قریشی اور بلوچستان سے ڈاکٹر فیض کاکڑ، نوید جان بلوچ اور امان بلوچ کے نام تجویز کیے تھے.

..

ضرور پڑھیں: مولانا فضل الرحمان پر غداری کا مقدمہ چلانے کی باتیں ، اپوزیشن حکومت کیخلاف بھرپور وار کیلئے تیار


Top