سیاچن میں برفانی تودہ گرنے سے چار بھارتی فوجی اور دو قلی ہلاک

سیاچن (قدرت روزنامہ) سیاچن میں برفانی تودہ گرنے سے چار بھارتی فوجی اور دو قلی ہلاک ہو گئے . تفصیلات کے مطابق برفانی تودہ گرنے کا واقعہ گذشتہ روز پیش آیا .

ضرور پڑھیں: سیاچن میں برف کا تودہ گرنے سے 2 بھارتی فوجی ہلاک

بھارتی حکام نے بتایا کہ آٹھ فوجی اہلکار معمول کی گشت پر تھے کہ برفانی تودوں کی زد میں آ گئے. فوجی حکام کا کہنا ہے کہ ان کی ہلاکت ہائپوتھرمیا یعنی انتہائی ٹھنڈ کی وجہ سے ہوئی ہے. اس حوالے سے بھارت کے وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے مائیکروبلاگنگ ویب سائٹ ٹویٹر پر اپنے پیغام میں ان فوجیوں کو خراج عقیدت پیش کیا . انہوں نے کہا کہ سیاچن میں فوجیوں اور پورٹرز کی ہلاکت پر انتہائی دکھ ہوا. میں ان کی ہمت اور وطن کے لیے ان کی خدمات کو سلام کرتا ہوں. ان کے اہل خانہ سے میری دلی تعزیت. فوجی حکام نے خبررساں ادارے آئی اے این ایس کو بتایا کہ یہ فوجی ایک پٹرولنگ ٹیم کا حصہ تھے. وہ سطح سمندر سے 18 سے 19 ہزار فٹ کی بلندی پر برفانی تودوں کی زد میں آ کر پھنس گئے تھے. برفانی تودوں کے گرنے کا واقعہ پیر کو تین بجے سہ پہر کو 19000 فٹ کی بلندی پر پیش آیا. پھنسے ہوئے فوجیوں کو نکالنے کے لیے وسیع پیمانے پر امدادی آپریشن کیا گیا اور تمام فوجیوں کو وہاں سے نکال لیا گيا اور زخمیوں کو ہسپتال پہنچایا گیا.واضح رہے کہ قراقرم کے پہاڑی سلسلے میں تقریباً 20 ہزار فٹ کی بلندی پر واقع سیاچن کے محاذ کو دنیا کا ایک انوکھا جنگی محاذ تصور کیا جاتا ہے. یہاں گذشتہ 35 برس سے پاکستان اور بھارت کی افواج مدِمقابل ہیں اور یہ جنگ پاکستان اور بھارت کے لیے ایسا دلدل بن چکی ہے جس سے نکلنا مستقبل قریب میں دونوں ممالک کے لیے ممکن نظر نہیں آتا. اس طویل عرصے میں تقریباً تین سے پانچ ہزار فوجی اور کروڑوں ڈالرز گنوانے کے باوجود دونوں ممالک کے عسکری حکام اس محاذ سے واپسی پر تاحال قائل نہیں ہو سکے . گذشتہ 16 سالوں سے سیاچن پر بندوقیں استعمال نہ ہونے کے باوجود دونوں فریقین اپنے بنیادی موقف پر کسی قسم کی بھی لچک دکھانے سے قاصر ہیں.

سیاچن گلیشیئر پر درجہ حرارت منفی پچاس ڈگری سینٹی گریڈ تک گر جاتا ہے . یہی وجہ ہے کہ یہاں رہنے والے فوجیوں کی اکثریت مخالف فوج کے ساتھ جھڑپوں میں جان سے نہیں گئے بلکہ یہ لوگ برفانی طوفانوں، شدید سردی میں اعضا سن ہو جانے اور انتہائی بلندی پر آکسیجن کی کمی کی وجہ ان کے لیے جان لیوا ثابت ہوئی. اکثر فوجیوں کو انتہائی بلندی پر ہونے کی وجہ سے سانس میں تکلیف، سر درد اور بلڈ پریشر کے مسائل شروع ہو جاتے ہیں جس کی وجہ سے فوجیوں کو ہر وقت برفانی لباس (اِگلو) میں ملبوس رہنا پڑتا ہے.

..

ضرور پڑھیں: سیاچن میں بھارتی فوج کے ایک اورقافلے پر برفانی تودہ گر گیا ،متعدد اہلکار ہلاک


Top