single photo

جولائی سے اکتوبر تک کتنا ٹیکس جمع ہوا، آئی ایم ایف نے کون سا مطالبہ نہیں مانا،چیئرمین ایف بی آر نے بتادیا

اسلام آباد(قدرت روزنامہ)چیئرمین ایف بی آر شبرزیدی نے کہاہے کہ آئی ایم ایف نے ٹیکس ہدف میں کمی کا مطالبہ قبول نہیں کیاتھاتاہم وہ پرامید ہیں کہ وہ آئی ایم ایف کو قائل کرلیں گے . پاکستان ریونیو اتھارٹی کا قیام موخرکیاگیاہے لیکن ایف بی آر میں تنظیم نو اوراصلاحات کا عمل جاری ہے .

ضرور پڑھیں: آئی ایم ایف کی شرط،افراط زر میں کمی،حکومت اب مرکزی بینک کے بجائے کس سے زیادہ قرض لے رہی ہے؟ حیرت انگیز انکشافات

اوراس مقصد کیلئے اسٹیرنگ کمیٹی بھی قائم کردی گئی ہے. شبرزیدی کا کہناہے کہ ایف بی آر نے گزشتہ سال کی نسبت 16 فیصد زیادہ ٹیکس گروتھ حاصل کی

جبکہ جولائی تا اکتوبر کی سہ ماہی میں براہ راست ٹیکس کی مد میں 454 ارب روپے جمع کیے گئے. اے آر وائی نیوز کے مطابق اسلام آباد میں سینیٹ کی قائمہ کمیٹی خزانہ کا اجلاس ہوا جس میں چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی نے بریفنگ دی. انہوں نے بتایا کہ 5 ہزار 500 ارب ٹیکس ہدف کیلئے 43 فیصد کی گروتھ درکار ہے، جولائی تا اکتوبر 167 ارب روپے کا شارٹ فال رہا.چیئرمین ایف بی آر نے کہا کہ ایف بی آر نے گزشتہ سال کی نسبت 16 فیصد زیادہ ٹیکس گروتھ حاصل کی، جولائی تا اکتوبر ڈائریکٹ ٹیکس کی مد میں 454 ارب روپے جمع کیے. شبر زیدی نے کہا کہ سیلز ٹیکس کی مد میں جولائی تا اکتوبر 546 ارب روپے جمع ہوئے،

فیڈرل ایکسائز ڈیوٹی کی مد میں جولائی تا اکتوبر تقریباً 70ارب جمع ہوئے. انہوں نے بتایا کہ جولائی تا اکتوبر 209ارب کسٹم ڈیوٹی جمع ہوئی.اجلاس کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی نے کہا کہ پاکستان ریونیو اتھارٹی کے قیام کا معاملہ ملتوی کر دیا گیا، ایف بی آر میں باقی اصلاحات کا عمل جاری ہے.

..

ضرور پڑھیں: سینیٹ اور قومی اسمبلی کی خزانہ کمیٹی کا مشترکہ اجلاس طلب،آئی ایم ایف حکام دونوں کمیٹیوں کے مشترکہ اجلاس کو ”بریفنگ“دیں گے

Top