single photo

’’ بی بی! ترجمانی کا مطلب گالم گلوچ نہیں۔۔۔‘‘ وزیر اعظم عمران خان نے سب کے سامنے فردوس عاشق اعوان کی ٹھیک ٹھاک کلاس لگا دی، میٹنگ کے دوران حیرت انگیز صورتحال

اسلام آباد (قدرت روزنامہ)نامور تجز یہ کار عارف نظامی کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم عمان خان کی جانب سے فردوس عاشق اعوان کی ٹھیک ٹھاک کلاس لی گئی ہے کیونکہ وہ ترجمانی کے نام ہر گالم گلوچ کر ہی ہیں، جبکہ ترجمانی کسی اور چیز کا نام ہے . تفصیلات کے مطابق نجی ٹی وی چینل کے پروگرام میں گفتگو کرتے ہوئے سینئر تجزیہ کار عارف نظامی کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم کو چاہیئے کہ وہ شیخ رشید کو کھینچے، انکے غبارے سے نہ صرف ہوا نکالیں بلکہ 2 یا 4 پنکچر بھی لگائیں، شیخ رشید جو جاہلوں کی طرح باتیں کرتے ہیں ان باتوں کو لے کر کوئی کیا کہے؟ نواز شریف کے پلیٹ لیٹس کم ہو چکے تھے لیکن جب انکو میگا کٹ لگائی گئی تو اس کے بعد صورتحال خطرے سے باہر نکل چکی ہے، نواز شریف کی صحت کو بھی لے کر سیاست کی جارہی ہے، فردوس عاشق اعوان نے کہا کہ نوازشریف ٹھیک ٹھاک تھے، ہشا بشاش تھے گاڑی سے ہاتھ ہلاتے ہوئے خود اترے تو کیا فردوس عاشق اعوان یہ چاہتی تھیں کہ نواز شریف سٹریچر پر اسپتال آتے، انکے کلیجے میں تب ٹھنڈ پڑنی تھی؟ ان لوگوں نے بھی آگے کسی کو منہ دکھانا ہے، انکو سوچ کیوں نہیں آتی؟ آج تو نیب کے ہاتھ پاؤں بھی پھول گئے تھے ، ہیر چیز سیاست نہیں ہوتی .

عارف نظامی کا کہنا تھا کہ وزیر اعظم عمران خان کو شہباز شریف کو کال کرنی چاہیئے تھی اور یقین دہانی کروانی چاہیئیے تھے کہ نواز شریف کو تمام طبی امداد دی جائے گی ، لیکن اس وقت حکومت کے اعصاب پر دھرنا سوار ہے، ایک طرف شیخ رشید یہ دعویٰ کرتے ہیں کہ مولانا فضل الرحمان دھرنے کے لیے نکلنا نہیں چاہتے اور ساتھ ہی کہہ دیتے ہیں کہ مولانا کے غبارے میں ہوا بھری جاچکی ہے، انکو چاہہیئے کہ پہلے شیشہ دیکھیں اور پھر اپنے بیانات کو پڑے کر اندازہ لگائیں کہ ان میں کتنی ہوا بھری جاچکی ہے؟ فردوس عاشق اعوان کی بھی اسی بات پر کلاس لی گئی کیونکہ وہ ٹھیک طرح سے ترجمانی نہیں کر رہی ، ترجمانی کا مطلب گاالم گلوچ نہیں بلکہ حکومت کے اچھے کاموں کو کی تعریف کرنا ہے، حکوممت اُلٹی جانب چل پڑی ہے، جس کا کی منظوری لینی ہوتی ہے وہاں پر صدارتی آرڈیننس پاس کروا لیتی ہے، حکومت اپنے ہاتھوں سے پارلیمنٹ کو کمزور کر ہی ہے.

..

Top