single photo

حکومت نے جمیعت علمائے اسلام کی ذیلی تنظیم کو کالعدم قرار دینے کا فیصلہ کر لیا

اسلام آباد (قدرت روزنامہ) حکومت نے جمیعت علمائے اسلام (ف) کی ذیلی تنظیم کو کالعدم قرار دینے کا فیصلہ کر لیا ہے . تفصیلات کے مطابق حکومت نے جمیعت علمائے اسلام (ف) کی ذیلی تنظیم کو کالعدم قرار دینے کا فیصلہ کر لیا ہے .

ذرائع کے مطابق انصار الاسلام کو کالعدم قرار دینے کی سمری ارسال کر دی گئی ہے. کالعدم قرار دینے کی سمری وزارت قانون اور الیکشن کمیشن آف پاکستان کو ارسال کی گئی. ذرائع نے بتایا کہ انصار الاسلام کو کالعدم قرار دینے کی سمری وزارت داخلہ نے بھجوائی. سمری میں کہا گیا کہ جمیعت علمائے اسلام (ف) کی ذیلی تنطیم انصار الاسلام لٹھ برادر ہے اور قانون اس کی اجازت نہیں دیتا. ذرائع کے مطابق جمیعت علمائے اسلام (ف) کی ذیلی تنظیم انصار الاسلام پارٹی منشور کی شق 26 کے تحت الیکشن کمیشن میں رجسٹرڈ ہے. دوسری جانب خیال رہے کہ حکومت نے جمیعت علمائے اسلام (ف) کے آزادی مارچ کو ہر ممکنہ حد تک روکنے کا بھی فیصلہ کر لیا ہے. پاکستان تحریک انصاف کی وفاقی حکومت نے جے یو آئی ف کے آزاد مارچ کو روکنے کے لیے باقاعدہ منصوبہ بندی بھی شروع کر دی ہے. اس حوالے سےوزارت داخلہ کے ماتحت اسلام آباد پولیس اور موٹروے پولیس نے مشاورت شروع کر دی ہے. بتایا گیا ہے کہ جے یو آئی (ف) کے ممکنہ آزادی مارچ کے حوالے سے آئی جی اسلام آباد محمد عامر ذوالفقار خان کے زیر صدارت اہم مشاورتی اجلاس ہوا. اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ جمعیت علمائے اسلام کے آزادی مارچ کو اسلام آباد سے باہر ہی روکا جائے گا.پولیس حکام نے آزادی مارچ اور دھرنے کے دوران امن وامان کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے حوالے سے غور کیا. اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ شہریوں کے جان ومال کے تحفظ کو ہر صورت یقینی بناتے ہوئے مارچ کے شرکا کو اسلام آباد سے ہی باہر روکا جائے گا.

..

Top