single photo

وہ وقت جب قائد اعظم محمد علی جناحؒ نے اسرائیل کے پہلے وزیر اعظم کو کھری کھری سنا دیں

      اسلام اآباد(قدرت روزنامہ)میڈیا رپورٹس کے مطابق پاکستانی سیاستدانوں نے اسرائیلی بانڈز خریدے اور اسرائیل کے زیر اثر امریکہ میں اپنے مال کی سرمایہ کاری کی، ایسا کرنے سےان پاکستانی سیاستدانوں نے امریکہ میں اسرائیلی معیشت کو مضبوط کرنے میں اہم کردار ادا کیا . امریکی قانون کے مطابق، صرف امریکی اسرائیلی ان بانڈز کو خرید سکتے ہیں اور اسرائیلی نژاد امریکی تاجروں نے امریکہ میں اسرائیلی بانڈز میں سرمایہ کاری کرکے پاکستان کے سیاستدانوں کی مدد کی .

ضرور پڑھیں: تم کشمیر کے اندر کیوں نہیں گھس جاتے ۔۔۔۔۔ یہ سوال جیسا حکم قائد اعظم محمد علی جناح نے کسے دیا تھا ؟ تاریخ کا ایک حیران کر دینے والا ورق ملاحظہ کیجیے

ایک اخباری رپورٹ کے مطابق پاکستان اوراسرائیل کے درمیان یہ سیاسی تعلقات، 1948 ء میں اسرائیل کے قیام کے بعد فوری طور پر شروع ہوا. ڈیوڈ بین کے وزیر اعظم بنتے ہی اسرائیل نے پاکستان سے سفارتی تعلقات قائم کرنے کےلئے محمد علی جناحؒ کیلئے ایک ٹیلی گرام بھیجا لیکن محمد علی جناح ؒکے سخت جواب نے اسرائیل کو اس کی کی اوقات دکھا دی اور اسرائیل نے بانی پاکستان کے ہوتے پھر دوبارہ سفارتی تعلقات بارے بات کرنے کی کوشش نہیں کی . اس کے بعد 1953میں، امریکی سفارت کاروں نے پاکستان کے وزیر خارجہ محمد ظفراللہ خان کااسرائیل کے سف کے درمیان ملاقات کا اہتمام کیا.1993 میں، ریاست ہائے متحدہ امریکہ، پاکستان آرمی کے ڈائریکٹوریٹ جنرل کے ڈائریکٹر جنرل ملٹری آپریشن کے لئے (ڈی جی ایم او) کو بے نظیر بھٹو کے سرکاری دورے کے دوران، میجر جنرل پرویز مشرف نے اس سرکاری دورے پر اپنے ساتھ شامل ہونے کی دعوت دی گئی تھی. بے نظیر بھٹو اور ان کے ڈی جی ایم او نے 1993 میں نیو یارک میں اسرائیلی حکام، خاص طور پر واشنگٹن پہنچے تھے ان کے ساتھ ایک خفیہ میٹنگ کی .، جنرل مشرف نے اسرائیلی خفیہ ایجنسی موساد کے ساتھ آئی ایس آئی کے رابطہ کار تیز کر دیا تھا.پاکستان واپس آنے سے پہلے، محترمہ بے نظیر بھٹو نے اسرائیلی انٹیلی جنس ایجنسی موساد سے اپنی حفاظت کی ضمانت طلب کی.بے نظیر بھٹو،جو، دسمبر 2007. میں قتل کر دیا گیا تھا عبرانی روزنامے “Ma’ariv” نے بے نظیر بھٹو بارے اسرائیل کی خفیہ ایجنسی سے پوچھا تھا، سی آئی اے اور برطانیہ کی اسکاٹ لینڈ یارڈ، رن اپ میں اس کی حفاظت میں مدد کرنے کے لئے رپورٹ جاری کی. جنوری 2008. میں پاکستان کے انتخابات سے قبل پاکستان پیپلز پارٹی کی ہائی پروفائل لیڈرشپ اور تل ابیب کی لیڈر شپ کو نیویارک اور واشنگٹن ڈی سی کا دورہ کروایا، اور اس کے بعد 07 مئی بینظیر بھٹو نے نیویارک کے مہنگے ہوٹل میں اسرائیل کی اعلی شخصیت کی سالگرہ کی پارٹی کا اہتمام کیا تھا. ہوٹل مکمل طور پر ایک رات کےلئے بک کروایا گیا اور بل براہ راست محترمہ بے نظیر بھٹو کی طرف سے ادا کیا گیا تھا.. اعلی سیاسی شخصیات اس پارٹی میں شرکت کے لئے واشنگٹن ڈی سی اور تل ابیب سے اس ہوٹل میں پہنچے جس میں سابق وزیراعظم پاکستان بے نظیر بھٹو نے خصوصی تقریب کا اہتمام کررکھا تھا . اسرائیلی وزیر اعظم ایہود اولمرٹ نے یروشلم پوسٹ کو بتایا.بینظیر بھٹو سفارتی تعلقات کے قیام سمیت اسرائیل اور پاکستان کے درمیان تعلقات معمول پر لانے کےلئے اس خواہش کا اظہار کرچکی تھی . ،وزیر اعظم ایہود اولمرٹ نے یروشلم پوسٹ کو بتایاکہ دو ماہ قبل پاکستان کے لئے واپسی سے قبل بے نظیر بھٹو کوایک باہمی واقف کار کے ذریعے لندن میں پیغام پہنچایا گیا اوران سے کہا گیا کہ وہ مستقبل میں اسرائیل اور پاکستان کے درمیان تعلقات کو مضبوط بنانے کیلئےکا ایک پیغام نشرکروادیں .لیکن انہوںنے ایسا کرنے سے انکار کردیا تھا. جبکہ جنرل ضیائ الحق کے بعد پیپلزپارٹی دورمیںبینظیر بھٹو سے لندن اورنیویارک میں اسرائیلی صدر شمعون پیریز نے کئی بار ملاقاتیں کی اور اسرائیل کو تسلیم کرنے کے تعلقات میں آگے منتقل کرنے کے لئے دلچسپی کا اظہار بھی کیا .. بینظیربھٹو نے اس وقت اپنی خواہش کا اظہار کیا تھا کہ وہ اقتدار میں آنے کے بعد اسرائیل کا دورہ کریںگی . جس کےلئے انہوںنے شمعون پیرز سے دورہ کرنے کا وعدہ کیا تھا. ڈین Gillerman، اقوام متحدہ میں اسرائیلی سفیر، Ynet، اسرائیل کی روزانہ Yediot Acharonot ساتھ وابستہ ایک آن لائن اسرائیلی نیوز ویب سائٹ کو بتایا کہ بینظیر بھٹو سفارتی تعلقات کے قیام سمیت اسرائیل اور پاکستان کے درمیان تعلقات میں ایک معمول پر لانے کو دیکھنے کے لئے اس کی خواہش کا اظہار کرچکی تھی. سائٹ نے رپورٹ کیا ہے کہ اکتوبر 1995 ء میں وزیر اعظم محترمہ بے نظیر بھٹو کی وجہ سے “گولان کی پہاڑیوں اور یروشلم کی حیثیت جیسے بنیادی مسائل ابھی تک حل طلب ہیں . وزیر اعظم نواز شریف نے بھی نہ صرف اسرائیل کی ریاست کے ساتھ اپنے سفارتی تعلقات کو معمول پر لانے کی خواہش کا اظہار کیا تھا بلکہ انہوں نے کہا کہ اسرائیل کے ساتھ سیاسی بنیادپر کوآرڈینیشن قائم کیا تھاجس کے حوالے سے اکتوبر 1988 میں اسرائیلی ذرائع ابلاغ کہ صدر ایصر Weizman نے اپنے پاکستانی ہم منصب سے ملاقات کی تھی .

..

ضرور پڑھیں: کیا آپ جانتے ہیں کہ قائد اعظم محمد علی جناح اور عمرن خان میں کیا مماثلت ہے ؟ وہ راز جو آپ کو آج سے پہلے معلوم نہیں ہوگا

Top