single photo

گیارہ سال کا تھا تو ساتھیوں نے میک ڈونلڈ سے مفت برگر مانگا تھا، کرسٹیا نورونالڈو

میڈرڈ (قدرت روزنامہ) فٹ بالر کرسٹیانو رونالڈو نے کہاہے کہ جب وہ 11 سال کے تھے تو انہوں نے اور ان کے ساتھیوں نے میک ڈونلڈ سے مفت برگر مانگا تھا . گزشتہ دِنوں فٹ بالر کرسٹیانو رونالڈو نے اپنے انٹرویو میں ایک انکشاف کیاجس میں انہوں نے کہا کہ جب میں 11 سال کا تھا تو میں نے اور میرے ساتھیوں نے میک ڈونلڈ جا کر مفت برگر کی بھیک مانگی تھی .

ضرور پڑھیں: روس: فوجی اہلکار نے فائرنگ کرکے اپنے ہی 8 ساتھیوں کو قتل کردیا

کرسٹیانو رونالڈو کے مطابق جب میں 11 یا 12 برس کا تھا تو میں اپنے کھلاڑی ساتھیوں کے ساتھ اپنے اہلِ خانہ سے دور ’لزبن‘ میں رہتا تھا اور میرے اہلِ خانہ ’میڈیرا‘ میں مقیم تھے.رونالڈو نے کہا کہ وہ میرا انتہائی مشکل وقت تھا کیونکہ میں ہر تین ماہ کے بعد اپنے اہلِ خانہ سے ملاقات کرتا تھا، انہوں نے کہا کہ اتنی کم عمر میں ماں باپ سے دور رہنا آسان نہیں ہوتا.

انہوں نے مفت برگر دینے والی لڑکی کے بارے میں بتایا کہ ایک بار رات کے ساڑھے یا 11 بجے کے قریب مجھے اور میرے ساتھیوں کو شدید بھوک لگ رہی تھی، ہمارے پاس کھانے کو کچھ نہیں اور نہ ہی ہمارے پاس پیسے تھے کہ ہم باہر جا کر کچھ کھائیں.انہوں نے بتایا کہ جس اسٹیڈیم میں ہم مقیم تھے اس کے برابر میں ایک میک ڈونلڈ تھا، شدید بھوک نے ہمیں اسٹیڈیم سے باہر جانے پر مجبور کیا اور میں اپنے ساتھیوں کے ہمراہ باہر نکلا، جس کے بعد ہم میک ڈونلڈ کے پیچھے والے دروازے کے باہر جا کر کھڑے ہوگئے اور ہم نے آواز لگائی کہ کیا کوئی ہمیں مفت میں برگردے گا ان کے مطابق’جب انہوں نے یہ آواز لگائی تو میک ڈونلڈ کے اندر سے ایڈنا نامی لڑکی اور اس کے علاوہ دیگر دو لڑکیاں آئیں اور انہوں نے ہمیں فری میں برگر دئیے، اِس کے بعد ہمیں جب بھی بھوک لگتی تھی ہم دروازے کے باہر سے آوازلگاتے تھے او ر وہ لڑکیاں ہمیں مفت کے برگر دے دیتی تھیں.

..

ضرور پڑھیں: مولانا فضل الرحمان کے قریبی ساتھیوں کی حکومتی رہنما سے ملاقات کا انکشاف

Top