single photo

مسئلہ کشمیر : یہ اتنا آسان کام نہیں ، بڑی لمبی لڑائی ہے اور سب سے بڑی حقیقت یہ ہے کہ ۔۔۔۔۔ شاہ محمود قریشی کس سے اور کیا کچھ کہہ بیٹھے ؟ نئی بحث چھڑ گئی

شاہ محمود قریشی

اسلام آباد (قدرت روزنامہ) پاکستانی وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا ہے کہ سلامتی کونسل میں کشمیر پر گفتگو پاکستان کی کامیابی ہے . تاہم انہوں نے کہا کہ یہ ایک لمبی لڑائی ہے جو ہر محاذ پر لڑنا ہوگی .

ضرور پڑھیں: دھرنے کے دوران مولانا اور شاہ محمود قریشی کے مابین جہاز میں ملاقات کا انکشاف

اسلام آباد میں کشمیر پرحکومتی لائحہ عمل پر غور کے لیے سول ملٹری قیادت پر مبنی خصوصی کمیٹی کے ان کیمرہ اجلاس کے بعد فوج کے ترجمان کے ہمراہ ذرائع ابلاغ کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی نے کہا کہ نیویارک میں پانچ دہائیوں بعد پہلی بار مسئلہ کشمیر کو دنیا کے سب سے بڑے فورم پر اٹھایا گیا ہے، جو پاکستان کی بڑی سفارتی کامیابی ہے. تاہم انہوں نے کہا کہ سفارتی، سیاسی، قانونی محاذوں پر اب آگے کیا ہونا ہے، اس پر حکومتی مشاورت جاری ہے. جمعہ کے روز نیویارک میں سلامتی کونسل کے ایک اجلاس میں کشمیر سمیت کچھ موضوعات پر غیر رسمی مشاورت کو پاکستان اور بھارت دونوں نےاپنی اپنی جیت قرار دیا ہے. بھارت کا کہنا ہے کہ اس اجلاس میں کوئی ایسی بات نہیں تھی جس سے بھارتی موقف کی نفی ہوتی ہو. بھارت کے بقول جموں و کشمیر سے متعلق اس کے حالیہ اقدامات اس کا داخلی معاملہ ہے. پریس کانفرنس کےدوران فوج کے ترجمان میجر جنرل آصف غفور نے کہا، ”بھارت نے کشمیر کو جیل میں بدل دیا ہے. ہم توقع کرتے ہیں کہ وہاں تشدد بڑھے گا.‘‘ تاہم انہوں نے کہا کہ پاکستان کی طرف سے ’’موجودہ صورتحال میں انفرادی یا کسی اور طریقے سے کوئی بھی ایکشن پاکستان اور کشمیر کاز سے غداری ہوگی.‘‘ اس موقع پر شاہ محمود قریشی نے پھر خدشہ ظاہر کیا کہ بھارت کشمیر سے عالمی توجہ ہٹانے کے لیے کوئی ‘فالس فلیگ آپریشن‘ کرسکتا ہے. قریشی کے مطابق، ”ہمیں بھارت کی نیت پر شک ہے اور ان کے ارادوں سے واقف ہیں.‘‘ تاہم انہوں نے کہ پاکستان کی افواج ایسے کسی اقدام کے لیے تیار ہیں. شاہ محمود قریشی کا یہ بھی کہنا تھا کہ کشمیر کمیٹی سمجھتی ہے کہ مودی سرکار نے نہرو کے ہندوستان کو دفن کر دیا ہے. انہوں نے کہا، ”ہم اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ بھارت جس حکمت عملی سے آگے بڑھ رہا ہے، اس کے تین نمایاں کردار ہیں: وزیراعظم مودی، وزیر داخلہ امیت شاہ، اور قومی سلامتی کے مشیر اجیت دوال.‘‘ شاہ محمود قریشی نے کشمیر پر عالمی میڈیا کی رپوٹنگ کو سراہتے ہوئے کہا کہ انٹرنیشنل میڈیا نے بڑے عرصے بعد کھل کر پاکستانی موقف کا ساتھ دیا ہے. تاہم انہوں نے کہا کہ پاکستان کو اپنی لابنگ اور اپنی کوششیں تیز کرنا ہوں گی.انہوں نے کہا اس کام کے لیے پاکستانی دفتر خارجہ میں ‘کشمیر سیل‘ تشکیل دیا جا رہا ہے اور دنیا کے اہم دارالحکومتوں میں پاکستانی سفارتخانے کشمیر ڈیسک قائم کریں گے. ٹوئیٹر اور سوشل میڈیا پر سابق سفیر حسین حقانی اور بعض دیگر پاکستانیوں کی طرف سے حکومت کی کشمیر پالیسی پر تنقید کے حوالے سے پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں میجر جنرل آصف غفور نے کہا کہ یہ معاملہ وزارت مواصلات اور آئی ٹی کے ساتھ اٹھایا گیا ہے جب کہ وزیر خارجہ نے کہا کہ پاکستانیوں کو ‘ملک کے اندر اور باہر اپنی صفوں میں موجود میر جعفر اور میر صادق‘ جیسے لوگوں سے ہوشیار رہنا چاہیئے.) )

..

ضرور پڑھیں: شاہ محمود قریشی اور فواد چوہدری وزارت عظمیٰ کے امیدوار ہیں

Top