single photo

پاکستان کے اہم ترین صوبے میں اساتذہ کی بھرتی کے لیے تعلیمی معیار میٹرک مقرر کر دیا گیا

پشاور (قدرت روزنامہ)خیبرپختونخوا میں اب میٹرک اور ایف اے پاس طلبہ و طالبات بھی استاد بن سکیں گے، صوبائی حکومت نے قبائلی اضلاع میں اساتذہ کے لیے کم ازکم تعلیمی معیار میٹرک مقرر کر دیا، قبائلی نوجوانوں میں بھی خوشی کی لہر دوڑگئی . خیبرپختونخوا حکومت نے قبائلی اضلاع سے تعلق رکھنے والے مرد و خواتین نوجوانوں کو باروزگار کرنے کی منصوبہ بندی کرلی، میٹرک اور ایف اے پاس نوجوان اب سرکاری سکولوں میں اساتذہ بھرتی ہو سکیں گے .

ضرور پڑھیں: پی ایچ ڈی کے لئے بیرون ملک جانے والے پچاس سے زائد اساتذہ نے واپسی سے انکار کردیا،بیشتر خواتین سٹوڈنٹس نے بیرون ممالک شادیاں کرلیں، حیرت انگیزانکشافات

صوبائی مشیر تعلیم ضیاء اللہ بنگش کا کہنا ہے کہ قبائلی اضلاع میں پسماندگی کے پیش ںظر اساتذہ کا تعلیمی معیار کم کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے، اس سے قبل تعلیمی معیار بی اے رکھا گیا تھا.قبائلی نوجوانوں نے بھی حکومتی فیصلے کو سراہا ہے اور کہا نہ صرف روزگار ملے گا بلکہ قوم کے بچے معیاری تعلیم بھی حاصل کرسکیں گے. حکومت فیصلے سے سکولوں میں اساتذہ کی کمی کے حوالے مشکلات کا شکار قبائلی والدین میں بھی خوشی کی لہردوڑ گئی ہے. قبائلی اضلاع میں تعلیمی دروازے کھولنے کے لیے 5 ہزار سے زائد اساتذہ بھرتی کرنے کی منظوری دے دی گئی ہے جس کے یقیناً مثبت نتائج مرتب ہوں گے.

مشیرتعلیم خیبرپختونخوا ضیاء اللہ خان بنگش نے کہاہے کہ قبائلی اضلاع سمیت پورے صوبے میں 65 ہزار اساتذہ کی کمی کو پورا کرنے کیلئے اساتذہ کی بھرتی کاعمل جاری ہے. امسال 17 ہزار اساتذہ بھرتی ہوچکے ہیں اور دو تین مہینوں میں مزید تقریباً 12 ہزار اساتذہ بھرتی ہو جائیں گے جبکہ 12 ہزار مزید آسامیاں بھی بہت جلد مشتہر ہوجائیگی.اس پراسس کی تکمیل سے ہر پرائمری سکول میں 4 اساتذہ لازمی قراردیے جائیں گے. جبکہ پورے صوبے کے پرائمری سکولوں میں سکول لیڈرز نئے تعلیمی سال 2020 کے آغاز سے کام شروع کریں گے. یہ نو تعینات 3 ہزار سکول لیڈرز پرائمری سکولوں کی کارکردگی اور کلاس روم میں درس و تدریس کے عمل کو بہتر بنانے کیلئے کام کریں گے.

..

ضرور پڑھیں: سرکاری سکولوں کے اساتذہ پر ٹیوشن پڑھانے پر پابندی عائد خلاف ورزی پر کیا سزا دی جائیگی؟حکومت نے شاندار قدم اٹھا لیا

Top