گٹکے اور مین پوری پر پابندی

کراچی (قدرت روزنامہ) گٹکے اور مین پوری پر پابندی عائد کر دی گئی ہے . خلاف ورزی کرنے والے کو1 سے 6 سال تک قید اور 2 لاکھ روپے جرمانہ کیا جائیگا .

ضرور پڑھیں: جنوبی افریقی فاسٹ باولر کاگیسو ربادا پر پابندی عائد کر دی گئی

تفصیلات کے مطابق سندھ اسمبلی نے گٹکے اور مین پوری کی خرید و فروخت اور استعمال پر پابندی کا بل منظور کر لیاہے. اس بل کے مجموعی طور سندھ اسمبلی میں منظور کر لیا گیا ہے. اب گٹکے، مین پوری کی ذخیرہ اندوزی، دکانوں، سرکاری و غیر سرکاری اسپتالوں اور سکولوں میں خرید و فروخت پر پابندی عائد ہو چکی ہے. خلاف ورزی کرنے کی صورت میں 1 سے 6 سال قید اور 2 لاکھ روپے تک کا جرمانہ عائد کیا جائیگا. یاد رہےکہ ہائی کورٹ کی جانب سے گٹکا مارا بند کروانے کے حکم پر کچھ عرصہ بعدآئی جی سندھ سید کلیم امام کے احکامات میں نرمی کے بعد شہر کے مختلف علاقوں میں گٹکے فروخت ہونا شروع ہو گئی تھی جبکہ لیاری بھر میں گٹکا ماوا کے کارخانے بھی کھل گئے تھے جہاں سے پولیس کے بیٹر اپنے طور پر بھتہ بھی وصول کررہے تھے،ذرائع کے مطابق پولیس حکام کی جانب سے گٹکا اور ماوا کے خلاف مہم میں نرمی کے بعد شہر کے مختلف علاقوں میں ایک بار پھر گٹکا ماوا فروخت ہونے لگا تھا

جبکہ لیاری بھر میں گٹکے کی فروخت کے ساتھ ساتھ کارخانے بھی کھل گئے تھے جو بیٹر اپنے طور پر چلارہے تھے جہاں سے بھتہ بھی وصول کیا جارہا تھا،کلاکوٹ اور چاکیواڑہ کے علاقوں میں گینگ وار کا سپورٹرز نے بھی گٹکے کے بند کارخانے کھول لئے تھے ،کلاکوٹ کے علاقے غریب شاہ روڈ ہری مسجد کے قریب گینگ وار کے جواری محمد کچھی کے بیٹے آصف کے کارخانے پر شاہنوازکچھی،عرفان کچھی ،ریحان اور سلطان گٹکا تیار کرکے جواد کے دکان تک پہنچاتے تھے جہاں سے کلاکوٹ اور چاکیواڑہ سمیت لیاری کے مختلف علاقوں میں سپلائی ہو رہا تھی،ذرائع کے مطابق محمد کچھی ہری مسجد اور چاکیواڑہ بہارکالونی الفلاح روڈ پراپنے پارٹنر فیجا اور اسکے ساتھی قادر کے ہمراہ جوا بھی کھلے عام چلارہاتھا،کلاکوٹ کے علاقے افشانی گلی میں حامد سربازی اور تاہو افشانی کے کارخانے کھل گئے تھے،چاکیواڑہ کے علاقے سنگولین بسمہ اللہ ہال کے سامنے حنیف کا بیٹا سعید کارخانہ چلارہا تھا.

..

ضرور پڑھیں: کاشف عباسی پر لگی پابندی کس بڑی طاقت نےچیلنج کر دی ؟ نام آپ کے تما م اندازے غلط ثابت کر ڈالے گا


Top